کشکول

میں خاموشی سےکہانی بْنتی ہوں۔ تم کہاں مصروف ھو ؟’

میرے خیالات توسیلاب کی مانند ھیں۔ تم بند کیوں لگوانا چاھتے ھو؟

آجاؤ  مل بیٹھ کے ھم کردار سنبھال لیتے ھیں۔ تم مجنوں بنو گے یا رام پری؟

تم غصّہ کیوں ھوتے ھو؟ میں تو مذاق کر رھی تھی۔

ہاں ہاں میں واقعی مذاق کر رھی تھی۔ لو ہنس لو اب تم۔۔’ـ’

وہ کیا جانے۔ کیسے جانے کیوں کر جانے آخر۔

کہتا ھے اپنی ذات کے حصّے پنہاں رکھے ھیں میں نے۔ اب زرا بتلاؤ! ذات بھی کبھی چھپ سکی ھے پیارے؟

ہاں البتّہ اگر کوئی جاننا ھی نہ چاھتا ھو۔

ذات تو چھپا دی جاتی ھے۔ بند کردی جاتی ھے۔ گم کردی جاتی ھے۔حالات کی بھینٹ چڑھا دی جاتی ھے۔

ذات تو خون ھے! بہتا رہتا ھے، رستا رہتا ھے۔ گرچہ اگر تم چاہو تو دیکھو۔ مگر تم چاہو گے کیوں؟

!سنو دیکھو تو ذرا یہاں پر زخم ھے کوئی۔ خون رستا رہتا ھے۔۔یہ کیسی تکلیف ھے؟

!مگر تم تو سمجھتے ھو میں ھنستی ھوں، مسکراتی ھوں، بات کرتی ھوں تو میں خوش ھوں

!خوشی گر اس کو کہتے ھیں تو خدایا! خوشی نہ دینا کسی کو

رگِ جاں سے جو لپٹ جائے، روح تک کو جو نگل جائے وہ خوشی کیا ھے؟

‘تم کہتے ھو خامشی کی زباں پہ کمال حاصل ھے تمھیں۔

مجھے ذرا بتلاؤ میری ذات کے دریچے وا کیوں نہ کئے اب تک؟

میرے در و دیوار تو پگھلنے لگے ھیں، زنگ آلود ھونے لگے ھیں۔۔

تو کیا تم یہی چاھتے تھے؟ میرے مندر کی گھنٹی ھمیشہ یوں ھی بجا کر بھاگ جاؤ گے؟

یہ زنجیریں سڑنے لگی ھیں پیارے۔ مجھے ڈر ھے یہ ٹوٹ نہ جائیں۔۔

کیونکہ اگر یہ ٹوٹ گئیں تو میں بھی بکھر جاوں گی۔

تو یوں کرو کہ تم چلے جاو۔ ھاں ھمیشہ کے لئے۔

میں روز روز ایک ھی سزا نہیں جی سکتی پیارے۔ مجھے ایک ھی دفعہ میں توڑ پھوڑ دو؟’

میں تم سے خوشیاں تو نھیں مانگ رھی ہوں جو تم اس قدر حقارت سے دیکھتے ھو۔

میں تو صرف اپنی وفاؤں کی جزا مانگ رہی ھوں۔۔

!یہ دیکھو کشکول لئے آج تمھارے مزار پہ حاضر ھوں، بھکاری بنی بیٹھی ھوں۔۔

یوں کرو کہ اپنی خاک سے مجھے معطر ھونے دو۔۔۔یوں کرو کہ مجھے امر کر دو۔۔۔

ماریہ عمران۔ٍٍ

Advertisements

22 thoughts on “کشکول

  1. Arindam Saha says:

    کیا عنوان ہے … كشكول
    کیا اپ لکھ …
    کیا بہاؤ …
    کیسے الہی …
    کس طرح کی ذاتی …

    مجھے تسلسل میں کچھ لکھنا چاہتا تھا لیکن اس وقت یہ صرف بے عیب زیور کرنے کے لئے ایک توہین ہو جائے گا احساس ہوا کہ

    بس اتنا کہوں گا کہ …

    جیسے ایک دریا سمندر میں جا کر اپنا وجود کھو دیتی ہے، اسی طرح ہم بھی اپنے وجود کو ایک اسی …بھگوان میں کھو دیں

    پھر نہ کوئی بھگوان رہے گا نہ پرست … نہ رہے گا بھکاری اور نہ ہی كشكول …

    You see I tried… If you don’t understand anything, please try harder… If you fail again… then… well… you can ask me… I will translate it back to English or Hindi 😛

    • randomlyabstract says:

      جیسے ایک دریا سمندر میں جا کر اپنا وجود کھو دیتی ہے، اسی طرح ہم بھی اپنے وجود کو ایک اسی …بھگوان میں کھو دیں

      پھر نہ کوئی بھگوان رہے گا نہ پرست … نہ رہے گا بھکاری اور نہ ہی كشكول

      I loved this line.

      تمام دریا بالآخر اک بھگوان ھی میں جا کے ملتے ھیں۔ ھاں لیکن سمندر کی موجوں کو تب تک سکون نھیں آئیگا جب تک ۔ذات۔ نہیں ملیگی۔ جب ذات مل جائے تب سب مل جائے۔
      نہ کوئی بھگوان رہے گا نہ پرست … نہ رہے گا بھکاری اور نہ ہی كشكول

      Well yes,

      بندہ جب اپنی ذات لے کے ھاضر ھو جائے اورخود کو اس بے پایاں سمندر میں غرق ھونے کی ٹھاں لے۔۔تب ھی وہ بھکاری سے سلطان بن جاتا ھے۔

      You see I am trying too. If you don’t get this ask me right away. 🙂

  2. Arindam Saha says:

    Okay… Let me translate the comment right away… (to remove any confusion…)

    What a title…
    What a write-up
    What a flow …
    How divine …
    How personal …
    I wanted to write something in continuation but then realized it would be an insult to the flawless jewel

    Main bas itna hi kahunga…

    Jaise ek nadi sagar mein jaa kar apna astittva (apni pehchaan) kho deti hai, usi tarah hum bhi bhagwaan ke saath milkar apna astittva kho den…
    Phir na bagwaan rahega… na bhakt (devotee)… na bhikhari hoga… aur na hoga kashkol… 🙂

    • randomlyabstract says:

      Koi confusion nhi hui. 🙂 Thank you so much for your wonderful feedback, both in Urdu and English, it means a lot. =)
      No jewel is flawless unless supervised by other professionals too. I love your point of view regarding ‘kashkol’. Here’s a translation of my previous comment:

      “Jaise ek nadi sagar mein jaa kar apna astittva (apni pehchaan) kho deti hai, usi tarah hum bhi bhagwaan ke saath milkar apna astittva kho den…
      Phir na bagwaan rahega… na bhakt (devotee)… na bhikhari hoga… aur na hoga kashkol…”

      Tamaam darya bil-akhir ek hi ‘bhagwan’ me ja ke milty haen. Han lekin samandar ki mojoun (waves?) ko tb tak sukoon nhi milta jab tak ‘zaat’ na miljae. Ke jab zaat mil jae tb sab miljae.
      ‘Phir na bagwaan rahega… na bhakt… na bhikhari .. aur na kashkol…’

      Banda jab ‘apni’ zaat le ke hazir ho jaye aur uss be-payaan (limitless?) samandar me garrq (plunge/deep dive/doob jany ke lye) hony ki thaan le (pakka irada-strongly convince self to do so) tab hi wo bhikaari se sultaan ban jata hy.

      Thank you for taking time to read this, I am much pleased that you did.

      • Arindam Saha says:

        Now I feel I did not get the notion of zaat presented here… In hindi zaat has multiple and complicated meanings… From the context I could not figure out the precise meaning here.

        Is it supposed to mean ‘astittva’?

        Thanks for the translation… warna phir se google se ek hi cheez ko english, hindi aur bangla mein translate karna padta… (No translation is perfect… so optimised version of the three was used to understand the post :P) You see… Where there is will… there is way… 😉

        • randomlyabstract says:

          ‘Astittva’ is right I think, and you got the right meaning too. But ‘zaat’ itself is something deep enough to deserve all complicated meanings and interpretations.

          Ah yes, where there is will there is a way! You proved it. 😉

    • randomlyabstract says:

      کافی خوشی ھوئی یہ جان کر کہ آپ نے پڑھا۔۔اور پسند کیا۔ اور اردو میں لکھا
      🙂 Thank you Arindam. I thought you people won’t understand an Urdu post. 😛 But aap tou kamaal ke haen. 😉 And no, the translator didn’t mess anything.

  3. Moniba says:

    You’re the best urdu writer i’ve ever read. Better than namra ahmed or umera or ashfaq ahmed or anyone for that matter.
    The very best.
    I’m a proud cousin.
    This is…amazing.

    • randomlyabstract says:

      Moniba? Haha. This surprised me so much.
      Jazakillah. Thank you. Gracious! ^_^

      These writers.. they inspire me.

      Dil Dargah
      Ya Ilaahi
      Talaash
      Mus’haf
      Peer-e-Kamil
      Pari Zad
      Zaaviya
      Mae Naara e Mastana

      Ye sab.

      Sigh. I ❤ you so much.

  4. White Pearl says:

    Bohat aala Maria…… I was impressed the first time I read it and now I am impressed again…… It was like a dukhi afsaana so brilliantly written. I don’t have words to tell you how beautiful it is….. Jo batain tum ne ki hain aik time tha jab same me b aisa scha tha… pher waqae aisa hogya tu you know I felt like mene aisa kyun socha…anyways. This was really good. You should start writing a novel or something in urdu… Bohat acha likho gi tum.

    • randomlyabstract says:

      Ye ke tum chalay jao? Ek hi dafa me tor phorr do? Tou kia burai hae isme.. Sukoon wesy nhi tou aesay sahee.
      But you’re right.

      Thank you for your lovely words. Mjhay nahi pata ye kab kesay likhi but ye pata hae ke mae royi thi ye likh ke. Jesa ke ye sachh ho. Par mae sachh nhi likhti na. jhoot likhti hun. 🙂
      Good to know you liked it. Ek aur cheez likhun gi Urdu me. Jald Inshaa Allah.. (=

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s