تدبیر تقدیر

تم شمع بجھانا چاہتے ہو
مندر کو گرانا چاہتے ہو
مسجد سے نہ آئے صدا کوئی
ہر شور مٹانا چاہتے ہو
آدم نے چھوا جو شجرِ ممنوع
مسکرائی خلقت اور کیا استقبال یوں
بخشی کنجی نئی اک دنیا کی
تم گناہگار ٹہرانا چاہتے ہو
دو دل جو ملیں، سُر تال کھلیں
محبت جو کریں بے لوث کریں
انجام سے پہلے کیوں آخر
تم عنوان مٹانا چاہتے ہو
اے اہل زمیں ذرا یہ تو بتاؤ
کیوں خود کو تھکانا چایتے ہو؟

~ماریہ عمران

Advertisements

66 thoughts on “تدبیر تقدیر

    • randomlyabstract says:

      Sorry? ^_^

      Tum shamma bujhana chahty ho
      Mandir ko girana chahty ho
      Masjid se na aye sada koyi
      Har shor mitaana chahty ho
      Adam ne cho’owa jo shajr-e-mamnoo
      Muskurayi khalqat aur kiya istaqbal yun
      Bakhshi kunji nayi ek dunya ki
      Tum gunahgaar tehraana chahty ho
      Do dil jo milen sur taal khilen
      Muhabbat jo kren be los karen
      Anjaam se pehly kyun aakhir
      Tum unwaan mitaana chahty ho
      Ae ahl-e-zameen zara ye toh btao
      Kyun khud ko thakana chahty ho?!

      (kunji= key, shajr-e-mamnoo= forbidden fruit~ paradise, khalqat= dunya/kaainat/every single creation)

      • Arindam Saha says:

        Sorry for the late response… 😦

        Arrey tum kya mandir giraaoge
        Humein gunehgaar thahraaoge?
        Kis masjid ki azaan ko
        Hamesha ke liye dabaaoge?

        Tod do hazaaron moorat
        Par laakhon hamaare dil mein hain
        Tod do laakhon minaarein
        Allah to aakhir dil mein hai

        Aye moorkh, digbhramit, naadaan
        Karmon ke fal se anbhigya anjaan
        Kyun fizool khoon bahaate ho?
        Kyu khud ka mazaak banaate ho?

        Kab tak is jahaan ko raat daraa hi paayi hai?
        Har baar damakte sooraj se phir se dharti ujlaayi hai
        Jis jannat ki chaah tumhe wo dhokha hai, mrig-trishna hai
        Kyun har dharam ke jahannum mein sadnaa chaahte ho?

        moorkh = stupid
        digbhramit = one who has lost the sense of direction
        anbhigya = anjaan (pure Hindi form)
        damakta = shining
        dharti ujlaayi hai = has enlightened the world
        mrig-trishna = mirage

        • randomlyabstract says:

          Great!
          I like your message.
          Achi khasi classical hindi, by the way. 😉

          Jannat mrig-trishna nahi exactly, but jis jannat ki chaah me na-haq khoon bahaya jae jis ksi bhi religion me, wo zaroor hy ~ which goes true with respect to your last line.

          Raat waqai darra nahi payi hy ziada dair tak. Noor phel hi jata hy. Kyunke sooraj ka nikalna bar-haq hy. Jb tk ye dunya qaaim hy, that is. 🙂
          Thank you Arindam, for doing it yet again. 😉

          • Arindam Saha says:

            😦 I tried to keep it as Urdu-ish as possible… But shaayad thodi zyada Hindi ho gayi… 😐

            Agreed… I meant the same thing… Jannat to hai, but bechaare galat jagah dhoondh rahe hain…

            “Thank you Arindam, for doing it yet again.”

            What’s the ‘it’? 😛

          • randomlyabstract says:

            Lol ye Urdu-ish hy phir Hindi-ish me mera kia hoga. =p Wesy we’re learning quite somethings about Hindustani ‘prakraten’ and ‘ap-bharansh’ wagera nowadays. I just googled ‘Ajanta ka mandir’ too, to find those texts printed on Ashok’s pillar.

            Ghalat jagah dhoond rahy hyn Jannat, aur kafi sary log kar rhy haen aesa.

            And by ‘it’ I meant the detailed response and understanding. How you instill hope n optimism in each one of your poems is commendable. So thank you for that. 😀

          • Arindam Saha says:

            🙂 Hindi-ish bhi to aapne padhaa hi hai mere blog pe… 😛

            Great to know that you are learning about apbhransh and prakrit… I hope you are enjoying it…

            It is always a pleasure to give a response to your work… I really mean it… 🙂

      • Rafiullah Mian says:

        روئے زمیں سے خلقت پھوٹی

        یہ لائن میرے خیال میں موزوں رہے گی کیوں کہ اس سے پانچویں لائن میں شجر ممنوع کا ذکر ہے، جو کہ زمین ہی سے پوٹھا خواہ وہ جنت کی زمین کیوں نہ ہو۔
        پھر یہ کہ قرآن کی ایک آیت کے مطابق بھی ہے جس میں کہا گیا کہ “اور وہ تھمیں اس وقت سے خوب جانتا ہے جب اس نے تمھیں زمین سے پیدا کیا۔” سورہ نجم آیت 32
        خلقت کے معنی ہیں، نوع انسان، مخلوق

        • randomlyabstract says:

          بیشک۔
          🙂
          بہت شکریہ۔۔۔

          یہ مصرع اگر یوں لگایا جائے تو پھر تیسرے مصرع میں بھی تبدیلی کرنی ہوگی؟؟

          آدم نے چھوا جو شجرِ ممنوع
          روئے زمیں سے خلقت پھوٹی
          بخشی کنجی نئی اک دنیا کی —-()-
          تم گناہگار ٹہرانا چاہتے ہو

          • Rafiullah Mian says:

            نہیں، اس کی ضرورت نہیں ہے کیوں کہ یہ دونوں مصارع محاورے کے طور پر استعمال کیے گئے ہیں، اور ان کا مطلب یہ ہے کہ جب شجر ممنوعہ کا پھل کھایا گیا تو اس ایک عمل کے نتیجے میں مستقبل میں زمین پر آدم کی نسل پھیلی- یعنی ہہ تیسرا مصرع مستقبل کی طرف اشارہ ہے

            لیکن ان سب باتوں سے ہٹ کر ایک گزارش کرنا چاہوں گا، اگر آپ برا نہ مانیں تو، اور وہ یہ کہ اپنے ان تمام مصارع کو اس طرح لکھیں کہ ان میں پھرپور روانی آجائے- یعنی جب آپ انہیں گنگنائیں تو کہیں پر بھی جمپ نہ آئے، اور زبان بہتے پانی کی طرح مصرع ادا کرسکے- اس کے بعد آپ کو اس میں اور بھی زیادہ لطف آئے گا- آپ تجربہ کرکے دیکھ لیں-

          • randomlyabstract says:

            سب سے پہلے تو بہت معزرت اس قدر تاخیر سے جواب دینے کی۔ دوسری بات یہ کہ مجھے بلکل بھی برا نہین لگا۔ آپکی پُرخلوص نصیحت کے لئے شکرگزار ہوں۔
            ابھی صرف شاعری شوقیہ یا اظہار خیال کے لئے کرتی ہوں، اسے بہتر بنانے کے لئے بہت کچھ سیکھنا باقی ہے۔ روانی واقئی سب سے اہم ہوتی ھے۔۔ امید ہے مستقبل میں مزید سیکھنے کا موقع ملیگا۔

            =)

          • Rafiullah Mian says:

            تاخیر کا لفظ کچھ چھوٹا نہیں یہاں پر
            🙂
            لیکن خیر، یہ تو محض تفنن طبع کی خاطر کہا- عمومی طور شاعری اظہار خیال ہی ہوتی ہے- وہ بھی اپنے رجحان اور شوق کی وجہ سے- آپ اگر شوق رکھتی ہیں تو ضرور اس علم سے واقفیت حاصل کرنے کی کوشش کریں- بہت اچھی بات ہوگی اور علم کے حصول پر جو لطف اور سرشاری آتی ہے، اس میں تو کوئی شک نہیں ہے- مجھ سے کچھ پوچھنا ہو تو بلاجھجک ہوچھ سکتی ہیں آپ

    • randomlyabstract says:

      جزاک اللھ۔
      بانو قدسیہ کی کتاب ھے راجہ گدھ۔۔۔ اسی سے متاثر ہو کے لکھی ہے۔۔ بہت خوشی ہوئی کہ آپ کو میری کوشش پسند آئی۔
      =)

    • randomlyabstract says:

      Thank you for your comment, Harshda. Is there a specific Urdu word or line that you’d like knowing the translation of? I’ll be glad to help. 🙂

      Wesy in a nutshell: the first few lines are related to religion, phir there is Adam Eves and Paradise lost (and that it was all meant to be), then there is unconditional love and end me it’s about why we, the living, are so bent on making it difficult for ourselves and others. Which is also the main idea of the entire thing.

      The title taqdeer tadbeer is a theme inspired by one of Iqbal’s famous couplets on ‘khudi’.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s