وکالت

‘میں جانے کے لئے تیار ہوں۔’

‘تم نے خود کو ہلکا کرلیا ہے ناں؟’

‘ہاں! اور میں نے خود بھی سب کو معاف کردیا یے۔۔۔ سب، سوائے ایک ’

‘ایسا مت کہو!۔۔۔ اسے عذاب ہوگا’

‘پہلی بات تو یہ کہ وہ عذاب سے نہیں ڈرتا! اور اسے صرف بدلہ ملے گا، عذاب نہیں’

‘تم پھر سوچ لو’

‘میں اللہ جی سے بات کر چکی ہوں۔ صرف اسے ہی نہیں کرسکتی۔ ایک بوجھ اٹھا لونگی’

‘لیکن’

‘آپ کو اللہ جی نے اسکی وکالت کے لئے بھیجا ہے ناں؟ مجھے سمجھ نہیں آتا وہ اس سے اتنی محبت کیسے کرسکتے ہیں جب وہ ہی نہیں کرتا؟’

‘وہ تم سے محبت کرتے ہیں!۔’

‘انہیں میں منا لونگی۔ یا پھر آپ انہیں کہیں وہ ہی مجھے منا لیں’

Advertisements

5 thoughts on “وکالت

  1. Hiba says:

    Since this was short, I took the time to read it and stutter a bit over it, but at least I got it.
    I liked the last line very much.
    It was kind of innocent and also a little stubborn. 🙂

  2. Ali Adnan says:

    بہت بہت عمدہ ۔ ۔ اللہ سے جس کی دوستی ہو جاتی ہے وہ ایسے ہی اپنے دوست سے ضد کرتے ہیں اور ناز اُٹھواتے ہیں
    🙂

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s