2020, Poems and poetry, Urdu musings

یہ کیسی خبر

جب کھڑکی کے اس پار چیخنے کی آواز آئی

تو لپک کر پہنچنے والا پہلا شخص

تجسس کے مارے آیا تھا

بروقت امداد کسے ملتی ہے

مدد کے لیے روتے ہیں تو خبر بنتی ہے

سب کو تسکین ملتی ہے

وہ جو خبر ملنے پر آتے ہیں

اپنا حق جتلاتے ہیں

ہم ہی تو اسے جانتے تھے

مرحوم بڑا بے صبرا تھا

م ع ۱۴ اکتوبر ۲۰۲۰

Standard
2019, Urdu musings

Maseeha Mazaq

Maseeha!
Tum ho ke mai?

Ye batain saari jhoot hain ya sachh? Kia pata sachh keh kar dhoka hojaye. Kia pata jhoot hi sara sachha ho?

Tum samajhtay rahay tum maseeha ho

Kia pata kuch anokha ye qissa ho

Kia pata tum jis talaash per niklay, mai uskey dusray siray pe kharay jab tumhara intizar kartay thak jaun tou tum se kaheen agaay nikal jaun.

Tum samajhtay rahogay mai palat aungi kyunke tumhe lagta hai tum maseeha ho

Mera Maseeha mujhay tor kar jor deta hai. Lekin tumhe kia dikhata hai? Jhoot? Ya sachh?

Kia pata Uski Maseehai tumhe bhi lag jaye. Kia pata tumhe maafi mil jaye

Kia pata kabhi tum mujhay maseeha samjho.

Kia pata tum is uljhan se kabhi na niklo

Aameen.

Standard
2019, Urdu musings

Munafiq

Kia yaar. Kisi cheez me bhi hoti muhabbat me munafiqat na hoti.

Tum ne udhar aasman pe bithaya aur dil ka darwaza kheench liya. Lo gir gaye. Par girnay pe maaloom hua ab peron talay zameen bhi nahi rahi thi. Socho kitni chot ayi hogi.

Kon sa saal chal raha hai tum kis saal ki yaad ho? Pata nahee wo azaab jhelay bhi waqt hogaya. Sadyan tou nahee beeteen par neendain beet gayeen.

Na ansu na dua na guzarish na shikayat. Sirf aik kasak. Ya Muhabbat kartay ya Munafiq hotay.

Standard
2019, By the roaring waves!, Poems and poetry, Urdu musings

Haar

Meray kuch khuwab hain
Unhe tum khareed lo
Umeedon ke jitnay rang
Zang pakaranay lagay hain
Un ka mai tou kia karun?
Tum samait lo
Beshak khali booseeda bastay me band kar ke chor do
Kaheen phaink do
Magar inhe zinda dargor hotay mai dekh nahi sakti
Ye zimmedari mai sahaar nahi sakti
So isay tum apnay sar le lo
Ye aik qatal meray naam pe
Meray maazi, meray haal, meray mustaqil ke sitaron jugnuon titliyun ka tum kardo
Aur akhir me
Apnay se jurri har yaad
Har baat
Is zaat ka har raaz
Dua, aansoo, hansi, marzi
Jala kar khaak kardo
Meri haar amar kardo



Standard
2018, Urdu musings

Teri Chahat

ایک آپ کی چاہت ہے اللہ جی۔  میری چاہت بنتی ہے تو کونپل، سمٹتی ہے پھر گہرا کنول۔  پھوار پڑتی ہے پھر گویا اوس پڑ جاتی ہے۔  سوکھے کانٹے گرنے لگتے ہیں اللہ جی دل تو گوشت کا ٹکڑا ہے، سہار نہیں پاتا۔  دیکھتے ہی دیکھتے میری چاہت پر سنؔاٹا چھا جاتا ہے جیسے پھول کنویں میں جا پڑا ہو۔  کبھی بعد میں، اتنے بعد میں کہ کنویں کی دیواروں کے کان ترس گئے ہوں، آواز آتی ہے: ’یہ میری چاہت ہے خدایا۔  میری چاہت سن لیجیے لیکن صرف تب۔ ۔ ۔‘ اور یہاں تک آ کر پھر سے پھوار پڑتی ہے۔  یکایک موسلادھار بارش۔  کنویں کی دیواریں گونج اٹھتی ہیں۔  ’صرف تب خدایا جب اس میں تیری چاہت بھی شامل ہو۔‘

Aik Aap ki chahat hai Allah ji. Meri chahat banti hai tou konpal, simat’ti hai phir gehra kanwal. Phuwaar parti hai phir goya ous parr jati hai. Sookhay kaantay girnay lagtay hai Allah ji dil tou gosht ka tukrra hai, sahaar nahi pata. Dekhtay hi dekhtay meri chahat par sannaata chhaa jata hai jesay phool kunwain me ja parra ho. Kabhi baad me, itnay baad me ke kunwain ki deewaron ke kaan taras gaye hun, awaz ati hai: “Ye meri chahat hai Khudaya. Meri chahat sun lejiye lekin sirf tab…” Aur yahan aa kar phir se phuwar parti hai. Yakayak mosla dhaar baarish. Kunwain ki deewarain gonj uthti hain. “Sirf tab ya Khudaya jab is me Teri chahat bhi shamil ho.”

Standard
2018, My Writings, raw and rough, Urdu musings

Diary of a 3:12 AM-er

Bohat arsay baad aik nazm likhnay lagi thi. Balkay likhnay kia lagi thi, wo nazm hi mujhay likh rahi thi. Unwaan tha ‘be-dili’. Aur phir pehla misra tumhe be-dili se sochnay par tha. Uskay bad aik khayal ata lekin shaam ke dhal janay aur khuwab ke ban janay ka darr… agay aik lafz kam reh gaya. Jo cigarette ka sar hota hai na? Usay masalna tha. Lekin na lafz aya na baat bani. Hath jo kehtay kehtay uper utha tha phir hawa me hi reh gaya. Bhai ne dekh kar poocha, “you are in love, right?” Mai munh bana ke reh gai.

I am in love, right? Duh I’m in love. With what, I don’t know. I am so disconnected from myself, or maybe I’m just so connected with myself that I’ve lost the ability to touch on the surface of things (or thoughts?) and say this is this and that is that. I can’t say these words are true. I can’t say they are not. I don’t know.

Kuch zamana beeta hai mai araam se nazmen likh sakti thi. Araam se tou nahi khair, jahan shairi hai wahan aaraam kahan. Magar phir bhi kabhi na kabhi. Aik khaas kefiyat hoti thi. Aisay tou mai pehlay kitabain bhi bohat parh leti thi ab arsa hua.

I just cannot. I haven’t read a proper book in a proper sitting like a proper reader since ages. The last was All the light we cannot see which is now in my taaaaaall pile of unfinished ones. I did translate a huge chapter though. It was on Islam and science and reason and modernism and everything like that. A good experience – both in terms of subject and skill.

It’s gonna be sehri time here. I made a fruit-oatmeal smoothie yesterday jiska oatmeal part no one liked and smoothie they all did. Lol. I heard it was healthy like that but I guess I’ll omit the oatmeal now.

Nah, I’m not much of a kitchen person. But it’s Ramadan, so… oh, happy Ramadan to you!

Standard
2018, Urdu musings

Khatam Shudd

Darwaza khula chora tha meny. Chahtay na chahtay nazar uth uth ke jati thi, wehem ne dil ko yun muthi me jakarr rakha tha ke sirf takleef milti thi aur us se bhagnay ka koi tareeqa samajh hi nahi ata tha. Tum se bhagnay ka koi tareeqa samajh nahi ata tha.

Mujhay lagta tha tum aogay.

Jantay ho, har ahat par chonk jati thi. Har shor pe tufaan uthta tha. Sab bikhar jata tha, mai samait’ti thi aur phir bikhar jata tha. Maine bohat koshish ki ke jo umeed phool nahi kaanta ho, usay zabardasti hi sahi kheench kar bahar nikal dun. Apnay aap ko bacha lun. Lekin mujhay darr lagta tha ke aisay zakham gehra hojayega. Aur ab nazar ata hai ke khula chornay se tou ye naasoor banjaega.

Standard
2017, Proses, Urdu musings

soliloquy

123

I could still show the pieces of your then-polluting, now-rotten heart, and prove to the world it was not I who was mistaken. I can also present myself as an evidence — a heap of mess, covering blisters caused by the burst of these emotions that never wait too long to spill. Ah, your name still holds magic.

130

تمہاری یاد آج بھی زخموں پر نمک کا کام کرتی ہے۔۔۔ چاہے یہ الفاظ استعمال کے ساتھ اپنی وقعت کھو ہی کیوں نہ چکے ہوں۔ ہاں، جلتے پر تیل، زخموں پر نمک۔  اچھا خاصا تمہیں بھول چکی تھی کہ آج ڈرائیور نے کہا کوئی دروازے پر پھول چھوڑ گیا ہے۔  پھول تو تمہاری طرف سے نہ تھے مگر ایسا تم کتنا کیا کرتے تھے!  صدیاں تو بیت گئی ہونگی؟۔۔۔  اب کون سے پھول، کہاں کی خوشبو!  ہاں مگر پھول تو آئے تھے۔  میں نے ڈرائیورسے پوچھا ان پر کوئی کارڈ لگا ہے کیا؟  جواب ملا، ہاں شاید۔  تو میں نے اس سے گذارش کی کہ خود ہی پڑھ کے بتا دے۔  مجھے تو ان سے وحشت آتی ہے!  بیچارا حیرت سے دیکھ ریا تھا، پڑھ بھی دیا۔  کسی اور نے بھجوائے تھے اور بھجوائے بھی کسی اور کے نام تھے!  میں تو سن کر ہنسنے لگی۔  ڈرائیور کو کہا ساتھ والے بنگلے میں جو سارہ بی بی رہتی ہیں انہیں کو دے آوٗ۔  ان کے لئے آیا ہے اور دیکھو یہاں پہنچ گیا!  کوریر والے سے غلطی ہوگئی ہوگی۔  غلطیاں تو خیر سب ہی سے ہوتی ہیں۔  مجھ سے بھی ہوئی تھی۔

میں لاوٗنج سے اٹھ کر اپنے کمرے میں آگئی۔

145

Standard
2017, Urdu musings

وکالت

‘میں جانے کے لئے تیار ہوں۔’

‘تم نے خود کو ہلکا کرلیا ہے ناں؟’

‘ہاں! اور میں نے خود بھی سب کو معاف کردیا یے۔۔۔ سب، سوائے ایک ’

‘ایسا مت کہو!۔۔۔ اسے عذاب ہوگا’

‘پہلی بات تو یہ کہ وہ عذاب سے نہیں ڈرتا! اور اسے صرف بدلہ ملے گا، عذاب نہیں’

‘تم پھر سوچ لو’

‘میں اللہ جی سے بات کر چکی ہوں۔ صرف اسے ہی نہیں کرسکتی۔ ایک بوجھ اٹھا لونگی’

‘لیکن’

‘آپ کو اللہ جی نے اسکی وکالت کے لئے بھیجا ہے ناں؟ مجھے سمجھ نہیں آتا وہ اس سے اتنی محبت کیسے کرسکتے ہیں جب وہ ہی نہیں کرتا؟’

‘وہ تم سے محبت کرتے ہیں!۔’

‘انہیں میں منا لونگی۔ یا پھر آپ انہیں کہیں وہ ہی مجھے منا لیں’

Standard
2017, Paintings and Scribblings, Poems and poetry, Urdu musings

سوئے محبت// For still remaining

mivt_randomlyabstractجب کبھی
میں ماضی کے ان پیلے اوراق کو پلٹتی ہوں
اجڑی محبت کی کسیلی بساند آتی ہے
جیسے لاش
رکھے رکھے سڑ چکی ہو
ساتھ ہی
ایک تصویر امید کی
نظروں کے سامنے ناچنے لگتی ہے
کہ جب وہ ہچکی لے کے ٹوٹی تھی
اور محبت
ان ہی تاروں، جگنووٗں، تتلیوں اور پھولوں کے درمیان
بے دردی سے چاکی تھی
ایک جنازہ دوبارہ اٹھتا ہے
ایک ماتم پھر سے ہوتا ہے


Every time
I open
This yellow book of our lost story
A funeral takes place, again
Not of hope, for it died long ago ( and nothing pierces my heart more than my brave warrior’s last breath )
But of every moment still saved from the blots

Sometimes it plays in slow motion,
Other times, happens in a blink.
Each time though, one more piece dies
Of what is left
And how I curse this mass for still remaining.

Standard
2016, Urdu musings

شورش

مجھ سے اس کا شور برداشت نہیں ہوتا۔  چھن، چھن، چھن، ڈھب ڈھب۔  زنجیروں میں جکڑا یہ پاگل آدمی نکلنے کو بےقرار رہتا ہے۔  جانتا بھی ہے باہراس کا کوئی غمخوار نیہں۔  یہاں قید ہے تو باہر کونسی آزادی ہے؟  میں اسے عموماً نیند کی گولی دے کر سُلا دیتی ہوں۔  مگر پھر بہت دفعہ یہ ضد پر اڑ جاتا ہے اور مجھ سے اس کا سنبھالنا مشکل — بلکہ بہت مشکل ہو جاتا ہے۔  دھاڑتا ہے:  شکست قبول نہ کرنے سے حقیقت ٹل نہیں جاتی!  چھپانے سے کب عذاب گھٹتا ہے، وہ تو اور بڑھ جاتا ہے!  میں آنکھیں موند کر ایسی بن جاتی ہوں جیسے سنا ہی نہ ہو۔  اور کبھی کبھار اسے چڑانے کو کانوں میں انگلیاں  بھی ٹھونس لیتی ہوں۔  مگر وہ کہاں چپ ہوتا ہے!  ہنسنے لگتا ہے۔  مجھے محسوس ہوتا ہے جیسے وہ میرا مذاق اڑا رہا ہو۔  بالآخر میں ہی ہار مانتی ہوں، پیروں میں پایل باندھ کر دوڑنے لگ جاتی ہوں۔  جلد ہی اسکی آواز میرے قہقہوں میں ملتی ہےاور ہم دونوں ایک ہی رنگ میں گُھل جاتے ہیں۔  ہم بالکل ایک سے ہو جاتے ہیں۔

(10 April 16)

Standard
2015, Urdu musings

Tumharay Naam.

Haan tou nahi ho na tum paas. Main ne kia karna hai. Jeena hai. Aur wesay tumharay baghair koi mar bhi nahi rahi. Tum ne kaha tha na koi nahi marta kisi ke liye. Theek hi kaha tha. Main subah uthti hun, kaam pe jaati hun, ghar aati hun tou bachchon ko dekh leti hun. Sab kuch tou wesa hi hai. Bus tum nahi ho aur sach me ab tou mujhe farq bhi nahi parta. Mein yaad nahi karti tumhain. Kabhi ek lamhay ko shayad kar bhi leti hongi magar yaad nahi. Aakhri baar sadiyon pehley roi thi. Ab seekh lia hai mein ne kisi kay liye na ronay ka dhang. Aa gaya hai mujhe sab kuch. Sab kuch. Sab kuch. Sab. Sab.                    Tumhain batana chahti hun ke yahan sab khair hai. Meri beti aur mera beta dono theek hain. Mazay me hain. Hamaray pas khanay ko aik se aik cheez hoti hai. Kabhi khali pait taraptay nahi sotay. Ye loug school jatay hain, kaam me haath bhi bataty hain, shikayat nahi kartay. Hum me se koi bhi shikayat nahi karta. Khush rehna seekh gaye hain. Rehm nahi mangtay. Apna apna jeetay hain. Saath detay hain. Bohat si cheezon me saath detay hain…
Tumharay honay na honay se koi farq nahi parta. Waqai nahi parta. Ab ye na samajhna kay bar bar duhraa kar jataa rahi hun taakay tumhain bura lagay. Nahi mein sirf tumharay sukoon ke liye bata rahi hun ke kabhi tum palatt kar aanay ka socho tou uss khayal ko bhi phaansi de dena. Hamari zindagiyan tabah mat karna. Dekho hum sab bohat khush hain. Main tumhain yaad bhi nahi karti ab.

Kia tum wahan khush ho? Wo tumara khayal rakhti hai? Tum ab bhi khanay me bhindi aur gosht shoq se khatay ho? Raat ko beech me uth kar paani peetay ho? Cigarette lena chhor di hai? Na chhori ho tou ab chhor do. Ye zindagi ko khatam karti hai. Wese mujhe farq nahi parta matlab mujhe farq hi kia parna hai! Mujhe tou us ki boo bhi nahi aati ab. Soch rahi hun kabhi mera beta naa piye. Usay hargiz aisa nahi karne dungi. Tum apne ird gird kay logon ka khayal rakhna.                         Raat kaafi nikal gayi hai. Chalti hun.

This is a transliterated version of تمہارے نام [Thank you, Mahaah, for typing it out.]

Standard
2015, Urdu musings

تمہارے نام۔

ہاں تو نہیں ہو نا تم پاس۔  میں نے کیا کرنا ہے۔  جینا ہے۔  اور ویسے تمہارے بغیر کوئی مر بھی نہیں رہی۔  تم نے کہا تھا نا کوئی نہیں مرتا کسی کے لئے۔  ٹھیک ہی کہا تھا۔  میں صبح اٹھتی ہوں، کام پہ جاتی ہوں، گھرآتی ہوں تو بچوں کو دیکھ لیتی ہوں۔ سب کچھ تو ویسا ہی ہے۔  بس تم نہیں ہو اور سچ میں اب تو مجھے فرق بھی نہیں پڑتا۔  میں یاد نہیں کرتی تمہیں۔  کبھی ایک لمحہ کو شاید کربھی لیتی ہوںگی مگر یاد نہیں۔  آخری بار صدیوں پہلے روئی تھی۔  اب سیکھ لیا ہے میں نے کسی کے لئے نہ رونے کا ڈھنگ۔  آگیا ہے مجھے سب کچھ۔  سب کچھ۔  سب کچھ۔  سب۔  سب۔           تمہیں بتانا چاہتی ہوں کہ ہہاں سب خیر ہے۔  میری بیٹی اور میرا بیٹا دونوں ٹھیک ہیں۔  مزے میں ہیں۔  ہمارے پاس کھانے کو ایک سے ایک چیز ہوتی ہے۔  کبھی خالی پیٹ تڑپتے نہیں سوتے۔  یہ لوگ اسکول جاتے ہیں، کام میں ہاتھ بھی بٹاتے ہیں، شکایت نہیں کرتے۔  ہم میں سے کوئی بھی شکایت نہیں کرتا۔  خوش رہنا سیکھ گئے ہیں۔  رحم نہیں مانگتے۔  اپنا اپنا جیتے ہیں۔  ساتھ دیتے ہیں۔  بہت سی چیزوں میں ساتھ دیتے ہیں۔۔۔     تمہارے ہونے نہ ہونے سے کوئی فرق نہیں پڑتا۔  واقعی نہیں پڑتا۔  اب یہ نہ سمجھنا کہ بار بار دہرا کر جتا رہی ہوں تاکہ تمہیں برا لگے۔  نہیں میں صرف تمہیں تمہارے سکون کے لئے بتا رہی ہوں کہ کبھی تم پلٹ کر آنے کا سوچو تو اُس خیال کو بھی پھانسی دے دینا۔  ہماری زندگیاں تباہ مت کرنا۔  دیکھو ہم سب بہت خوش ہیں۔  میں تمہیں یاد بھی نہیں کرتی اب۔

تم کیا وہاں خوش ہو؟  وہ تمہارا خیال رکھتی ہے؟  تم اب بھی کھانے میں بھنڈی اور گوشت شوق سے کھاتے ہو؟  رات کو بیچ میں اٹھ کر پانی پیتے ہو؟  سگریٹ لینا چھوڑ دی ہے؟  نہ چھوڑی ہو تو اب چھوڑ دو۔  یہ زندگی کو ختم کرتی ہے۔  ویسے مجھے فرق نہیں پڑتا مطلب مجھے فرق ہی کیا پڑنا ہے!  مجھے تو اس کی بُو بھی نہیں آتی اب۔  سوچ رہی ہوں  کبھی میرا بیٹا نہ پئے۔  اسے ہرگز ایسا نہیں کرنے دونگی۔    تم اپنے اردگرد کے لوگوں کا خیال رکھنا۔                                                رات کافی نکل گئی ہے۔  چلتی ہوں۔

Standard
2015, Paintings and Scribblings, Urdu musings

Daam-e-deevangi—دامِ دیوانگی

خوف، غم اورجستجو کی تنگ گلیوں سے نکل کر

کوئی رنگوں میں کھوئے اب ناچنے لگا ہے

اسکے پیروں پر بندھی رسی کُھل کر اتر جو گئی ہے

اور اب ایک پایل

چھن، چھن، چھن بولتا ہے۔

شور مچتا ہے پر آوازوں کی دنیا خالی ہے، کچھ ہے جو آسمانوں سے اتر کر رقص کرتا ہے

کچھ ہے جو

پیچھے سایوں میں چھپ کر روتا ہے۔

اندھیرا اب ختم ہے تو روشنیوں کی چکاچوند بھی بیکار ہے

مگر دل نہ جانے کس کی تھاپ پر نکلنے کو بیقرار ہے

ایسا لگتا ہے جیسے تمام عالم

اس ایک لمحہ کی چاہ میں سب ہی وارنے کو تیار ہے۔

Khauf, gham, aur justuju ki tang galyon se nikal kar, koi rangon me khoye ab nachnay laga hae

Uskay pairon par bandhi rassi khul kar utar jo gai hae

Aur ab aik payal

Chann, chann, chann bolta hae.

 

Shor machta hae par awazon ki dunya khali hae, kuch hae jo asmaanon se utar kar raqs karta hae

Kuch hae jo

Peechay sayon me chupa rota hae.

 

Andhaira ab khatam hae tou roshnion ki chaka-chond bhi baikar hae

Magar dil na janay kis ki thaap par nikalnay ko beqaraar hae

Aesa lagta hae jesay tamaam alam

Is aik lamhay ki chah me sab hi waarnay ko tayyar hae.

ماریہ عمران

MLD_

Standard
2015, Urdu musings

Bandagi supardagi~

Insaan khuda banna chahta hae. Isay apnay wujood ki takmeel samajhta hae yani ke wo khudai hasil karay. Us ki paristish ki jaye din raat. Jism mandir, rooh zindagi! Subah kay sitaray ke chamaknay se raat ka chaand madham honay tak, shor se sannatay aur sannatay se shor tak, takleef me aur rahat me, har qadam sirf “ehsaas”. Aik aiteraaf. Aik naam. Koi kahay, aap aali maqaam! Inayat ho!

Kuch loug beharhaal ibadat nahi kar patay. Bandagi pe poora nahi utartay aur phir zamana unhain thokron pe chor deta hay. Aam mazahib ki tarah yahan bhi itaab nazil hota hay, aur sach maanye tou khudai ka dawa karnay walay inn lakhon khudaon me rehmaniat ki phir aik ramaq bhi baqi nahi rehti!

Standard
2015, Urdu musings

لقمہ، لقمہ اجل۔

تم نے اس کے منہ سے نوالہ کیوں چھینا؟ وہ کب سے بھوکی بیٹھی ہے تم نے اپنی بھوک میں اسکا حق مار ڈالا! ندیدی نہ ہو تو!۔

ماں نے بڑی بیٹی کو ڈانٹا۔ بڑی بیٹی جو چھہ سال کی تھی، اپنی سی چھوٹی دو سالہ بہن کو دیکھ کر زبان چڑانے لگی۔ جواب کچھ نہ دیا، البتہ آنکھیں کہتیں تھیں کہ امّاں! بھوک تو میری بھی نہیں مٹی۔۔۔

۔۔۔۔۔۔

کچھ دیر بعد دونوں لڑکیاں سڑک کے کنارے کھیلنے میں مصروف ہوگئیں۔ بچپن کے انمول رنگوں کو اپنے مٹی میں اٹے، پھٹے کپڑوں کے دامن میں سمیٹتے ہوئے بھوک پیاس سب بھول کر اٹھکیلیاں کرنے لگیں۔ میں تمہیں پکڑوں گی نہیں تم مجھے نہیں پکڑ سکتیں، یہی شور ان کے ہنسنے کی آوازوں کے ساتھ چہار سو پھیل گیا گویا زندگی حسیں ہوگئی۔ ماں بھی سکون سے فٹ پاتھ پر ٹیک لگائے آنکھیں موند کر بیٹھ گئی۔

سچ ہے کوئی کب تک خالی کنویں میں جھانک جھانک کر روتا ہے؟ زندگی کا کام تو چلنا ہےسو وہ چلتی رہتی ہے۔۔۔

۔۔۔۔۔ـ ـ۔۔۔۔۔ ـ۔ ۔۔۔۔۔۔

تقریبا دس منٹ بعد اچانک ایک کالے رنگ کی بڑی پجارو فاصلہ پر آکر رکتی ہے۔ چھوٹی بچی کھیلنے میں مگن رہتی ہے جبکہ بڑی پورے انہماک سے گاڑی کی طرف تکنے لگتی ہے۔ پھر کسی سوچ کے تحت ادھر بڑھ جاتی ہے اور کھڑکی کھٹکا کر آواز دیتی ہے۔ صاب! اماری ماں بوت بیمار اے! وہ فٹ پاتھ پر آرام کرتی ماں کی طرف اشارہ کرتے ہوئے بولتی ہے۔ کچھ مدد کردو صاب! امیں کجھ روپیہ دے دو!۔۔

اپنی معصومانہ آواز میں منمناتے ہوئے اسے ایک دم خیال آتا ہے کہ کہیں صاب نے دو منٹ پہلے اسے بہن کے ساتھ کھیلتے ہوئے نہ دیکھ لیا ہوـ یا پھر کہیں امّاں نے ادھر دیکھ کر آواز لگادی توسارا جھوٹ پکڑا جائے گا اور بھیک بھی نہیں ملیگی۔ وہ جھٹ سے اللہ جی سے دعا کرتی ہے کہ ایسا نہ ہو اور پوری امید سے صاب کی طرف دیکھنے لگتی ہے۔

صاب جو پہلے سے اس جانب متوجہ ہوتے ہیں اسے پاس دیکھ کر خوشی سے مسکراتے ہیں۔ اور دروازہ کھول کر باہر نکل آتے ہیں۔

منّی! تمہیں پیسے چاہئے ہیں؟ آو میرے ساتھ چلو میں تمہیں جھولوں پر بھی لے جاونگا اور ایک پیاری سی فراک بھی دلواونگا! ادھر آو گاڑی میں۔۔۔ وہ اپنا ہاتھ آگے بڑھاتے ہیں۔ بڑی بیٹی جو انہیں حیرت سے دیکھ رہی ہوتی ہے، فورا ایک قدم پیچھے ہٹ جاتی ہے۔ اس نے تو اماں کی بیماری کا بہانہ بنایا تھا۔۔ انہیں کیسے پتہ چلا فراک کے بارے میں؟

ڈرو نہیں میں تمہیں ابھی واپس لے آونگا۔۔۔ آو میرے ساتھ! یہ کہتے ہوئے وہ اسے اپنے قریب کھینچھتے ہیں اور وہ جو اب تک ڈری رہی تھی، امّاں کو پکار اٹھتی ہے۔ امّاں بھی فورا ہی آنکھ کھول لیتی ہیں مگر اس سے پہلے کو وہ معاملہ سمجھ سکیں، صاحب بڑی بیٹی کو گاڑی میں دھکیل کر دروازہ بند کر چکے ہوتے ہیں۔ امّاں ہائے بچاوٗ بچاوٗ میری لڑکی کو کہاں لئے جا رہا ہے کہتے ہوئے اس جانب لپکتی ہیں اور گاڑی کے پیچھے پیدل بھاگنے لگتی ہیں۔ گاڑی والا تیزی سے فرار ہوجاتا ہے اور امّاں دل پکڑ کر رہ جاتی ہیں۔

آج ان کے سامنے سے ان کی بیٹی کسی وحشی کی بھوک کی نظر ہونے لگی ہے اور وہ بے بسی سے صرف خالی کنواں دیکھے جا تی ہیں۔

ــ ــ ـــ ـ ـــ ــ ـ ــ

13/03/15. ماریہ عمران

Standard
2015, Urdu musings

پت جھڑ

تم بےعزتی کے اس احساس کو نہیں سمجھ سکتے جس کے زیرِبار میں روز حصہ حصہ ٹوٹ رہی ہوں۔  میرا حرف حرف متاثر ہے چوٹ کھائے اس پرندے کی طرح جو اپنے صاف، سفید پروں پر خون کی باریک لکیریں کھنچتے تو دیکھتا ہے مگر بےبسی سے اپنے پَر پھڑپھڑاتے دم توڑ دینے ہی کو آخری آزادی کی صورت سمجھتا ہے۔  اس کے آنسو میرے دل کی دیوار پہ گرتے ہیں، تکلیف ہوتی ہے مجھے جب یہ دیواریں کمزور ہو کر کِر کِر چٹخنے لگتی ہیں۔

تمہاری بےاعتنائی ایک سِل کی مانند میرے وجود پہ رکھی ہے اور مجھے محسوس ہوتا ہے کہ جیسے میں اپنی ہی قبر میں دھنسی چلے جا رہی ہوں۔  آواز دینے کو کوئی یار نہیں ملتا لیکن تمہیں فرق بھی نہیں پڑتا کیونکہ تم صرف کھیلنا جانتے ہو۔  کھیلنا صرف، اور جیتنے سے تمہیں سروکار نہیں ہوتا لیکن شکست دینے سے تمہاری انا کو تسکین ملتی ہے۔  اس کے لئے تم کسی بھی حد سے گذر سکتے ہوکیونکہ تم ایک مرد ہو!  آزاد، خودمختار، بیباک۔۔۔ میں عورت ہوں اپنے جزبات کی غلام، تمہیں جتاتی ہوں تو جَتاتی نہیں۔ نہ کوئی جشن ہوتا ہے نہ ماتم، دونوں ہی مسکرا کر اپنے اپنے راستے چل دیتے ہیں۔  پھر کون صدیوں روئے کسے معلوم!۔۔

12:55— 25/1/15.

PJ

Standard
2014, Urdu musings

نحوست۔

نحوست اس کو نہیں کہتے
جو تم کسی کے گھر جاؤ
اور یکے بعد دیگرے
کوئی آفت گرجائے
کہ برتنوں کا کھنکنا
یا جھولوں کا ٹوٹ جانا
تو اٹل ہے

البتہ ہاں
جب ایک ہی دیس میں رہتے
کبھی ہندو کبھی مسلم
کبھی ’کرسچن‘ کبھی سنّی
کبھی اہلِ تشیع
کبھی بت کے پوجنے والے کو
کبھی رب کی کھانے والے کو
کبھی بچے کو کبھی بوڑھے کو
کبھی عورت کو کبھی بیوی کو
مار دیا جائے

صرف یہ کہہ کرکہ
اسکا مذہب میرا نہیں
یا اسکا اٹھنا لکھنا پڑھنا
میرے اٹھنے لکھنے پڑھنے
سے مختلف ہے
اسکے بستہ میں جو قرآن ہے
اسکا ورق ورق الٹا ہے
یا اس کے گلے میں
مسیحائی کا جو ہار ہے
میں اسے پسند نہیں کرتا

سو میری پسند اور یہ میری زمیں
میرا ہے یہ گھر میں اس کا امیں
یہ منحوس یے‘۔’

ماریہ عمران۔

Dedicated to the Christian couple mercilessly killed, and others dying in ‘the land of pure’. Bloodlust is boundless; it surely doesn’t bother categorizing before bringing you to your coffin.

Similar posts:

Standard
2014, Urdu musings

خاموشی

تم نے آبشاروں کو چپ ہوتے دیکھا ہے؟ کبھی کبھی اپنی تمام شان و شوکت میں بھی  پانی ساکت ہوجاتا ہے، آوازیں ماند پڑجاتی ہیں۔ پھر وہ بہتا نہیں گرتا ہے۔ ہلکے، ہلکےـ صرف کسی حکم کی تعمیل کرنے کوـ مگر سنو، پانی بےجان نہیں ہوتاـ یہی بوندیں جب پتھروں پہ پڑتی ہیں تو انہیں توڑ کررکھ دیتی ہیں۔۔۔ سوراخ کردیتی ہیں ان میں۔ پانی خاموش ہوتا ہے مگر اسکی بوند بوند بلا کا شور پالتی ہےـ ایسا کہ جاننے والے پر ہیبت طاری کردے۔
تم نے پتھروں کو ٹوٹتے دیکھا ہے؟


Tum ne aabsharon ko chup hotay dekha hae? Kabhi kabhi apni tamaam shaan-o-shokat mai bhi paani sak’t hojata hae, awaazain maand parjati haen. Phir wo behta nahi, girta hae. Halkay, halkay. Sirf kisi hukam ki taameel karny ko. Magar suno, paani be-jan nahi hota. Yehi boondain jab patharon pe parrti haen tou unhay torr ke rakh deti haen… Sorakh kardeti haen inn me. Paani khamosh hota hae magar iski boond boond bala ka shor palti hae. Aesa ke ‘jannay waly’ par haibat tari karday.
Tum ne patharon ko toot’ty dekha hae?

Standard
2014, Urdu musings

ماتم۔

سرخ گلاب کی پتیوں کو دھیرے دھیرے شاخ سے الگ کرتے ہوئے وہ اپنی ہی دنیا مین مگن تھی۔ دیوار سے ٹیک کئے، سفید سلک پشواس میں ملبوس وہ نہ جانے کتنی ہی دیر سے اپنی جگہ بیٹھی زمیں کو تک رہی تھی۔ آنکھیں دیکھو تو لگتا تھا برسوں کی جاگی ہو۔۔۔ چہرے سے بھی ایسی شدید تھکن عیان تھی کہ معلوم ہوتا صدیوں کا کوئی جوگ پالا ہو۔ یا پھر جس طرح کسی ملاح کو تمام کشتیان جلا کر اپنی آخری امانت سونپنے کی دیر ہو، وہ بھی اپنی زندگی کسی جھونکے میں کھو دینے کی منتظر ہو۔

تم یہاں بیٹھی کیا کر رہی ہو؟ میں کب سے دیکھتا ہوں تم اپنی جگہ سے نہیں ہلی۔۔ کس بات کا غم ہے تمہیں، کس مراد کو دل میں لئے پال رہی ہو؟

مجھے کیوں کوئی غم ہوگا بابا۔ خوشی غمی سے اپنے رشتے تو میں توڑ آئی ہوں۔ یہ بھی بھلا کوئی معنی رکھتے ہیں؟

بیٹے پھر تم یہاں قبرستان میں کیا لینے آتی ہو؟ مُردوں سے دل لگانے پرکونسا انہیں زندگی مل جاتی ہے؟ زندگی تو زندوں سے ملتی ہے۔ لین دین سے۔ تعلقات سے۔ جسم اور روح کو جوڑ لینے سے۔

بابا روح کو جوڑنا ہی تو چایتی ہوں۔ پر مجھے سکون نہیں ملتا۔ جسکا وجود بنجارہ ہو اسے کہیں پھول راس نہیں آتے۔۔۔

وجود زمین ہے بیٹے۔ زمین کبھی بانجھ نہیں ہوتی۔ دعا سب کچھ بدل دیتی ہے۔ ذات اور وجود میں دعا ہی پیاپبر بنی ہوتی ہے۔ کیا تمہیں زات کی تلاش نہیں؟

گلاب کا عرق اسکی انگلیوں کو لال کر ریا تھا۔ یا پھر شاید کوئی کانٹا چبھا تھا۔

ماریہ عمران۔

Standard
2014, Urdu musings

سنگ مرمر کا فرش پریوں کے محل میں
شیشے کے خول میں پانی کی بوندیں
جھڑی در جھڑی گری جا رہی ہیں
کہ معلوم ہوتا یے
کسی نے جادو کر رکھا ہو۔۔۔

مگر ان کا وقار انہیں پھسلنے نہیں دیتا۔

جھڑی در جھڑی یہ گری جا رہی ہیں
مگر ان کا ٹہراو
انہیں کھنکنے نہیں دیتا۔

موسیقی کی تھاپ میں
دھن در دھن اُتر آ رہی ہیں
شیشے کے خول میں پانی کی بوندیں۔۔۔

قوس و قزح کے رنگ اپنائے
آبشار سے یوں نکلتی جائیں
کہ جیسے
فنا و بقا کے تمام جھگڑے
کہیں دور چھوڑ آئی ہوں
جاوداں ہونے کو۔۔۔ ۔

ماریہ عمران۔


Sang-e-marmar ka farsh hae paryon ke mehal men
Sheeshay ke khol me paani ki boonden
Jharri dar jharri giri ja rahi haen
ke maloom hota hae
kisi ne jaado kar rakha ho… Continue reading

Standard