Diary of a 3:12 AM-er

Bohat arsay baad aik nazm likhnay lagi thi. Balkay likhnay kia lagi thi, wo nazm hi mujhay likh rahi thi. Unwaan tha ‘be-dili’. Aur phir pehla misra tumhe be-dili se sochnay par tha. Uskay bad aik khayal ata lekin shaam ke dhal janay aur khuwab ke ban janay ka darr… agay aik lafz kam reh gaya. Jo cigarette ka sar hota hai na? Usay masalna tha. Lekin na lafz aya na baat bani. Hath jo kehtay kehtay uper utha tha phir hawa me hi reh gaya. Bhai ne dekh kar poocha, “you are in love, right?” Mai munh bana ke reh gai.

I am in love, right? Duh I’m in love. With what, I don’t know. I am so disconnected from myself, or maybe I’m just so connected with myself that I’ve lost the ability to touch on the surface of things (or thoughts?) and say this is this and that is that. I can’t say these words are true. I can’t say they are not. I don’t know.

Kuch zamana beeta hai mai araam se nazmen likh sakti thi. Araam se tou nahi khair, jahan shairi hai wahan aaraam kahan. Magar phir bhi kabhi na kabhi. Aik khaas kefiyat hoti thi. Aisay tou mai pehlay kitabain bhi bohat parh leti thi ab arsa hua.

I just cannot. I haven’t read a proper book in a proper sitting like a proper reader since ages. The last was All the light we cannot see which is now in my taaaaaall pile of unfinished ones. I did translate a huge chapter though. It was on Islam and science and reason and modernism and everything like that. A good experience – both in terms of subject and skill.

It’s gonna be sehri time here. I made a fruit-oatmeal smoothie yesterday jiska oatmeal part no one liked and smoothie they all did. Lol. I heard it was healthy like that but I guess I’ll omit the oatmeal now.

Nah, I’m not much of a kitchen person. But it’s Ramadan, so… oh, happy Ramadan to you!

Advertisements

Khatam Shudd

Darwaza khula chora tha meny. Chahtay na chahtay nazar uth uth ke jati thi, wehem ne dil ko yun muthi me jakarr rakha tha ke sirf takleef milti thi aur us se bhagnay ka koi tareeqa samajh hi nahi ata tha. Tum se bhagnay ka koi tareeqa samajh nahi ata tha.

Mujhay lagta tha tum aogay.

Jantay ho, har ahat par chonk jati thi. Har shor pe tufaan uthta tha. Sab bikhar jata tha, mai samait’ti thi aur phir bikhar jata tha. Maine bohat koshish ki ke jo umeed phool nahi kaanta ho, usay zabardasti hi sahi kheench kar bahar nikal dun. Apnay aap ko bacha lun. Lekin mujhay darr lagta tha ke aisay zakham gehra hojayega. Aur ab nazar ata hai ke khula chornay se tou ye naasoor banjaega.

soliloquy

123

I could still show the pieces of your then-polluting, now-rotten heart, and prove to the world it was not I who was mistaken. I can also present myself as an evidence — a heap of mess, covering blisters caused by the burst of these emotions that never wait too long to spill. Ah, your name still holds magic.

130

تمہاری یاد آج بھی زخموں پر نمک کا کام کرتی ہے۔۔۔ چاہے یہ الفاظ استعمال کے ساتھ اپنی وقعت کھو ہی کیوں نہ چکے ہوں۔ ہاں، جلتے پر تیل، زخموں پر نمک۔  اچھا خاصا تمہیں بھول چکی تھی کہ آج ڈرائیور نے کہا کوئی دروازے پر پھول چھوڑ گیا ہے۔  پھول تو تمہاری طرف سے نہ تھے مگر ایسا تم کتنا کیا کرتے تھے!  صدیاں تو بیت گئی ہونگی؟۔۔۔  اب کون سے پھول، کہاں کی خوشبو!  ہاں مگر پھول تو آئے تھے۔  میں نے ڈرائیورسے پوچھا ان پر کوئی کارڈ لگا ہے کیا؟  جواب ملا، ہاں شاید۔  تو میں نے اس سے گذارش کی کہ خود ہی پڑھ کے بتا دے۔  مجھے تو ان سے وحشت آتی ہے!  بیچارا حیرت سے دیکھ ریا تھا، پڑھ بھی دیا۔  کسی اور نے بھجوائے تھے اور بھجوائے بھی کسی اور کے نام تھے!  میں تو سن کر ہنسنے لگی۔  ڈرائیور کو کہا ساتھ والے بنگلے میں جو سارہ بی بی رہتی ہیں انہیں کو دے آوٗ۔  ان کے لئے آیا ہے اور دیکھو یہاں پہنچ گیا!  کوریر والے سے غلطی ہوگئی ہوگی۔  غلطیاں تو خیر سب ہی سے ہوتی ہیں۔  مجھ سے بھی ہوئی تھی۔

میں لاوٗنج سے اٹھ کر اپنے کمرے میں آگئی۔

145

وکالت

‘میں جانے کے لئے تیار ہوں۔’

‘تم نے خود کو ہلکا کرلیا ہے ناں؟’

‘ہاں! اور میں نے خود بھی سب کو معاف کردیا یے۔۔۔ سب، سوائے ایک ’

‘ایسا مت کہو!۔۔۔ اسے عذاب ہوگا’

‘پہلی بات تو یہ کہ وہ عذاب سے نہیں ڈرتا! اور اسے صرف بدلہ ملے گا، عذاب نہیں’

‘تم پھر سوچ لو’

‘میں اللہ جی سے بات کر چکی ہوں۔ صرف اسے ہی نہیں کرسکتی۔ ایک بوجھ اٹھا لونگی’

‘لیکن’

‘آپ کو اللہ جی نے اسکی وکالت کے لئے بھیجا ہے ناں؟ مجھے سمجھ نہیں آتا وہ اس سے اتنی محبت کیسے کرسکتے ہیں جب وہ ہی نہیں کرتا؟’

‘وہ تم سے محبت کرتے ہیں!۔’

‘انہیں میں منا لونگی۔ یا پھر آپ انہیں کہیں وہ ہی مجھے منا لیں’

سوئے محبت// For still remaining

mivt_randomlyabstractجب کبھی
میں ماضی کے ان پیلے اوراق کو پلٹتی ہوں
اجڑی محبت کی کسیلی بساند آتی ہے
جیسے لاش
رکھے رکھے سڑ چکی ہو
ساتھ ہی
ایک تصویر امید کی
نظروں کے سامنے ناچنے لگتی ہے
کہ جب وہ ہچکی لے کے ٹوٹی تھی
اور محبت
ان ہی تاروں، جگنووٗں، تتلیوں اور پھولوں کے درمیان
بے دردی سے چاکی تھی
ایک جنازہ دوبارہ اٹھتا ہے
ایک ماتم پھر سے ہوتا ہے


Every time
I open
This yellow book of our lost story
A funeral takes place, again
Not of hope, for it died long ago ( and nothing pierces my heart more than my brave warrior’s last breath )
But of every moment still saved from the blots

Sometimes it plays in slow motion,
Other times, happens in a blink.
Each time though, one more piece dies
Of what is left
And how I curse this mass for still remaining.

شورش

مجھ سے اس کا شور برداشت نہیں ہوتا۔  چھن، چھن، چھن، ڈھب ڈھب۔  زنجیروں میں جکڑا یہ پاگل آدمی نکلنے کو بےقرار رہتا ہے۔  جانتا بھی ہے باہراس کا کوئی غمخوار نیہں۔  یہاں قید ہے تو باہر کونسی آزادی ہے؟  میں اسے عموماً نیند کی گولی دے کر سُلا دیتی ہوں۔  مگر پھر بہت دفعہ یہ ضد پر اڑ جاتا ہے اور مجھ سے اس کا سنبھالنا مشکل — بلکہ بہت مشکل ہو جاتا ہے۔  دھاڑتا ہے:  شکست قبول نہ کرنے سے حقیقت ٹل نہیں جاتی!  چھپانے سے کب عذاب گھٹتا ہے، وہ تو اور بڑھ جاتا ہے!  میں آنکھیں موند کر ایسی بن جاتی ہوں جیسے سنا ہی نہ ہو۔  اور کبھی کبھار اسے چڑانے کو کانوں میں انگلیاں  بھی ٹھونس لیتی ہوں۔  مگر وہ کہاں چپ ہوتا ہے!  ہنسنے لگتا ہے۔  مجھے محسوس ہوتا ہے جیسے وہ میرا مذاق اڑا رہا ہو۔  بالآخر میں ہی ہار مانتی ہوں، پیروں میں پایل باندھ کر دوڑنے لگ جاتی ہوں۔  جلد ہی اسکی آواز میرے قہقہوں میں ملتی ہےاور ہم دونوں ایک ہی رنگ میں گُھل جاتے ہیں۔  ہم بالکل ایک سے ہو جاتے ہیں۔

(10 April 16)

Tumharay Naam.

Haan tou nahi ho na tum paas. Main ne kia karna hai. Jeena hai. Aur wesay tumharay baghair koi mar bhi nahi rahi. Tum ne kaha tha na koi nahi marta kisi ke liye. Theek hi kaha tha. Main subah uthti hun, kaam pe jaati hun, ghar aati hun tou bachchon ko dekh leti hun. Sab kuch tou wesa hi hai. Bus tum nahi ho aur sach me ab tou mujhe farq bhi nahi parta. Mein yaad nahi karti tumhain. Kabhi ek lamhay ko shayad kar bhi leti hongi magar yaad nahi. Aakhri baar sadiyon pehley roi thi. Ab seekh lia hai mein ne kisi kay liye na ronay ka dhang. Aa gaya hai mujhe sab kuch. Sab kuch. Sab kuch. Sab. Sab.                    Tumhain batana chahti hun ke yahan sab khair hai. Meri beti aur mera beta dono theek hain. Mazay me hain. Hamaray pas khanay ko aik se aik cheez hoti hai. Kabhi khali pait taraptay nahi sotay. Ye loug school jatay hain, kaam me haath bhi bataty hain, shikayat nahi kartay. Hum me se koi bhi shikayat nahi karta. Khush rehna seekh gaye hain. Rehm nahi mangtay. Apna apna jeetay hain. Saath detay hain. Bohat si cheezon me saath detay hain…
Tumharay honay na honay se koi farq nahi parta. Waqai nahi parta. Ab ye na samajhna kay bar bar duhraa kar jataa rahi hun taakay tumhain bura lagay. Nahi mein sirf tumharay sukoon ke liye bata rahi hun ke kabhi tum palatt kar aanay ka socho tou uss khayal ko bhi phaansi de dena. Hamari zindagiyan tabah mat karna. Dekho hum sab bohat khush hain. Main tumhain yaad bhi nahi karti ab.

Kia tum wahan khush ho? Wo tumara khayal rakhti hai? Tum ab bhi khanay me bhindi aur gosht shoq se khatay ho? Raat ko beech me uth kar paani peetay ho? Cigarette lena chhor di hai? Na chhori ho tou ab chhor do. Ye zindagi ko khatam karti hai. Wese mujhe farq nahi parta matlab mujhe farq hi kia parna hai! Mujhe tou us ki boo bhi nahi aati ab. Soch rahi hun kabhi mera beta naa piye. Usay hargiz aisa nahi karne dungi. Tum apne ird gird kay logon ka khayal rakhna.                         Raat kaafi nikal gayi hai. Chalti hun.

This is a transliterated version of تمہارے نام [Thank you, Mahaah, for typing it out.]